Friday, May 24
Shadow

کاش او ویلا فر اچھہ اوٹھی (پہاڑی افسانچہ) شاہزیب اشعر

رستچ جلنیا اس ایک کویّا جٹھا۔ اس اپنے کلاسیے نی انہوار آئ۔ اس لغا کہ ایہہ دا لیکن فری اس سوچیا یو نا وے کوئ اور اس جیا وے۔ طارق چپ لنگیا۔ جیرا ایک آگیں گا تہ اس کنڈی ہا آواز آئ۔

او طارقہ میں لہ مڑ۔

آواز جانی پہچانی سی ۔ ہاۓ بختہ اوؤے یو تو زی۔ پتلون بُرشَٹ لائ نی۔ متھیر تیل ملیا نا۔ فل بابو بنتا نا زی۔ انہوار تہ آئ فیر سوچیا تھوخا نہ وے۔

کہان ملیشیں نا کڑتا تمی تہ کہان پتلون بَرشَّٹ۔ مہ لغا اے نی تو ایہہ عظیم دی۔ لِمّاں نا۔

عظیم آخنیس۔ کہ دسی طارقہ او ویلے بہوں یاد اینے دے۔ جدوں تختی دوات تہ نالیں نیا قلماں اننی ملیشیںے نے کپڑے لائ تہ ربڑے نی پمپی لائ گینے سیاں۔

اس ٹھل اپر بیٹھی پڑنے سیاں۔

اوۓ عظیماں جل اس خوہے اپر بجی چا پینیا ۔

آخاں تہ گل بانا سیس کہ یا دیے جدوں ایک واری آسیں سوق نیسا اینا تہ آسیں چھپی تہ سندھچ تَرۓ نا پروگرام منایا تہ ماسٹر رستچ پوڑیا سا تہ جتنی چہم پریٹ ہوئ سی۔ لالا چاء انی آیا ٹھی ۔ اپنے سکولہ نی گلاں یاد کرنیا طارقہ تہ عظیمہ کُھٹ چائ نا پیتا تہ اکھیچ اتھرو اینی ٹھی۔ایک جملہ دوئیں نے منہ چا نکتا

کاش او ویلا فر اچھہ اوٹھی۔

تحریر شاہزیب اشعر ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact