Friday, April 19
Shadow

آزاد نظم، انگبین عروج

انگبین عُروج


محبت خُوں میں شامل ہے
تبھی تو مٹ نہیں سکتی
ذہن کے بند دریچوں میں
کہیں یہ چھپ کہ بیٹھی ہے
تمہاری ذات کے اندر
تمہاری روح میں پنہاں
اداسی کا لبادہ زیب تن کر کے
خموشی اوڑھ کر جذبوں کی دھیمی آنچ میں پگھلی ہوٸ سی برف کی مانند رگوں میں
آج بھی یہ دوڑتی پھرتی ہے لیکن تم سمجھتے ہو
محبت ختم کر بیٹھے
اسے تم دفن کر بیٹھے
اور اس کی راکھ کو تم آگ میں دھواں بنا کر بھسم کر بیٹھے
سنو جاناں
محبت چھوڑ بھی دو تم
تعلق توڑ بھی دو تم
خطوں کو پھاڑ بھی ڈالو
وہ سارے وصل کے لمحے
تمہیں حق ہے بھلا ڈالو
محبت کے سبھی لمحے سبھی جذبے مٹا ڈالو
محبت مٹ نہیں سکتی
محبت مر نہیں سکتی
محبت خوں میں شامل ہے
رگوں میں دوڈتی پھرتی
کبھی یہ مِٹ نہیں سکتی!!!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact