Friday, May 24
Shadow

فرح ناز فرح کی شہکار کتاب عشقم پر پروفیسر خالدہ پروین کا بصیرت افروز تبصرہ

کتاب کا نام ۔۔۔۔۔عشقم (شعری مجموعہ)

شاعرہ۔۔۔۔۔۔۔۔فرح ناز فرح

مبصّرہ۔۔۔۔۔۔۔ خالدہ پروین

                      ” عشقم”

                 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پیاری اور قابلِ احترام ساتھی فرح ناز صاحبہ اور پریس فار پیس کی جانب سے محبت ، عزت افزائی اور پزیرائی کا مظہر ، تحفہ ۔۔۔۔۔ عشقم ۔۔۔۔ اپنائیت میں لپٹا ہوا  موصول ہوا ۔

فرح ناز فرحٌ کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں ۔ “کنجِ آبگیں” ہو یا “طیفِ عکس” ، رومانوی ناولٹ ہوں یا فکاہیہ ، غزل ہو یا نظم ہر جگہ اپنی منفرد شخصیت کی مانند ان مٹ اور نا قابلِ فراموش نقوش چھوڑ جاتی ہیں ۔

اس سستی شہرت پسندی ، جدت پسندی اور تُک بندی کے دور میں قارئین کے لیے ایک روایتی ، کلاسیکی اور معیاری شعری تخلیق کا منظرِ عام پر آنا کسی نعمت سے کم نہیں ۔

فرح ناز فرحٌ صاحبہ تو خوش قسمت ہیں ہی کہ اللہ تعالیٰ نے انھیں تخلیقی صلاحیتوں سے مالا مال کیا ہے لیکن قارئین کا فرح ناز صاحبہ کی تخلیقی نگارشات سے تعلق قائم ہونا بھی خوش قسمتی کی علامت ہے ۔

                          تعارف و تبصرہ

                         ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عنوان “عشقم” سے فروغ پانے والی خیال آفرینی کا سلسلہ ۔۔۔۔رقصم۔۔۔۔ جانم ۔۔۔۔۔ نازم سے جا ملتے ہوئے قاری کو کتاب کی مکمل قرآت پر مجبور کر دیتا ہے ۔

کتاب کی ظاہری خوب صورتی ، عمدہ کاغذ ، ہر صفحے کی تزئین و آرائش مع موزوں اور دیدہ زیب عکس شعری مجموعے کو مقناطیسی خصوصیات سے متصف کرتے ہوئے قاری کو اس کی جانب کھنچنے پر مجبور کر دیتے ہیں ۔

 مواد کی حسنِ ترتیب کا منفرد اور روایت سے منحرف انداز شاعرہ کی منفرد ، شخصیت اور پبلشرز کی غیر معمولی دلچسپی کو ظاہر کرتا ہے ۔

 مجموعہ عشقم دو حصوں غزلیات اور نظمیات پر مشتمل ہے جس میں 84 غزلیں اور 24 نظمیں شامل ہیں ۔

انتساب ہر کتاب کا لازمی جزو ہے لیکن منظوم انداز نے “امی کے نام انتساب” کو چار چاند لگا دیے ہیں:

         نرم ہاتھوں سے گوندھ کر مٹی

         ایک پیکر حسیں بنایا گیا

         زندگی کے حسین رنگوں سے

         سر سے پاؤں تلک سجایا گیا

         نور کچھ آسمان سے لے کر

         روح کی طرح اتارا گیا

         اور پھر ماں کا مرتبہ دے کر اسے

         سب سے افضل ترین بنایا گیا

پروفیسر “ظفر اقبال” کے زبانِ قلم سے فرح ناز صاحبہ کا تعارف اور “بشریٰ حزیں” اور “نیلما ناہید درانی” کی ماہرانہ رائے اور شاعرہ کا “من کی بات” شاہکار ہیں ۔

اب آتے ہیں شعری مواد کی جانب:

                            غزلیات

                            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فرح ناز صاحبہ کی شاعری کلاسیکی اور روایتی انداز کا تسلسل ہے جہاں خیالات ہوں یا جذبات  رومان کا رنگ اور مترنم انداز غالب دکھائی دیتا ہے ۔ بہار اور گل کی جلوہ گری ہے تو ہوائیں اور ستارے متاثر کرتے ہیں ۔

عشقم نام ہے۔۔۔۔۔ رقصم کی کیفیت کا جہاں جذبات رقص کرتے ہیں ، الفاظ رقص کرتے ہیں ، ردیفیں رقص کرتی ہیں اور نظارے رقص کرتے ہیں ۔

ہوائیں گنگناتی ہیں ، نظارے رقص کرتے ہیں

کنواری شب کےآنچل پر،ستارے رقص کرتےہیں

چڑھے جب چاند پورا، تب یہ لہریں مست ہوتی ہیں

ستارے مسکراتے ہیں ،کنارے رقص کرتے ہیں

بجے پازیب پتوں کی،تو گُل بھی جھوم جاتے ہیں

میری نیندوں میں سپنے بس تمہارے رقص کرتے ہیں

حیا کا ڈال کر آنچل کبھی جو مسکراتی ہو

خوشی کے رنگ چہرے پر،ہمارے رقص کرتے ہیں

لگی ہے آگ سینے میں ،چھپانے پر نہیں چھپتی

ستم یہ ہے نگاہوں میں ،شرارے رقص کرتے ہیں

خارجیت اور داخلیت کے حسین امتزاج کی بدولت ظاہری حسن جذبات کی چاشنی کے ساتھ ایسی دل کشی اختیار کر لیتا ہے کے نہ نظریں چرائی جا سکتی ہیں اور نہ ہی متاثر ہوئے بغیر رہا جا سکتا ہے ۔ حسن و عشق کے مقابلے میں عشق برتر اور ان مول ہے۔عشق میں بے توقیری کے بجائے عزت نفس کی کار فرمائی دکھائی دیتی ہے ۔

تُو حُسن ،تیرے ہوں گے بہت سے خریدار

میں عشق ہوں ہر دور میں بےمول رہی ہوں

قیمت میری لگانے کی اوقات نہیں ہے

میں امتحانِ عشق میں انمول رہی ہوں ۔

غزل کا کلاسیکی اور روایتی رنگ بھر پور ہے یہی وجہ ہے کہ کبھی غالب کی جھلک نظر آتی ہے تو کبھی میر کا اثر دکھائی دیتا ہے  اور کہیں ناصر کاظمی کا گمان گزرتا ہے ۔

سفال گر ہوں میرے سامنے ہے سب مٹی

اے میرے آئینہ گر تیرے رو برو کیا ہے

تو آئے میرے تخیل کی آفرینی میں

تو بھول جاؤں صنم میرے چار سُو کیا ہے

           ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جا چُکے دے کے یہ دعا کچھ لوگ

جا ملیں تجھ کو خوش ادا کچھ لوگ

پھول رستے میں کچھ بچھاتے ہیں

خار رکھتے ہیں جا بجا کچھ لوگ

              ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی دیا ہی جلاؤ بڑا اندھیرا ہے

یا کوئی گیت سناؤ بڑا اندھیرا ہے

ترے بغیر مری جاں یہ رات بھاری ہے

تم اپنے خواب جلاؤ بڑا اندھیرا ہے ۔

محبت اور عشق نام ہے تکالیف کا جہاں درد و الم اور

نا آسودگی کا اظہار عام ہے غمِ جدائی اور کسک غزل کا خاصہ ہے لیکن فرح ناز کی غزلیات میں عشق کی تکالیف مایوسی کے بجائے امید اور آسودگی کا پیغام دیتی ہیں۔

امید اور یقین کی رسی کو تھام کر

میں مشکلوں کے کوہِ گراں سے نکل گیا

کچھ نہ کچھ پھول تو رستے میں لگاتے جاؤ

ان پہ اک روز تمہیں لوٹ کے گھر جانا ہے

ہر سمت ہی پھیلے ہوئے ہیں جال یہاں

اڑنے کے لیے پھر بھی میں پر تول رہی ہوں

حوصلہ کانچ کا کھلونا تھا

ٹوٹنے سے مگر سنبھالا ہے

بے نیازی فرح کی شخصیت کا ایک نمایاں وصف ہے جو ان کی غزلوں میں جا بجا جھلکتا ہے ۔یہی بے نیازی عشق کے عروج اور دوام کا باعث ہے ۔

یہ جل  رہا یونہی بدگماں تیرے ساتھ بھی تیرے بعد بھی

رہا عشق یونہی یہ جاوداں تیرے ساتھ بھی ، تیرے بعد بھی

بن تیرے بھی گزر ہی جائے گی

اک ضرورت بلا ضرورت ہے

ہم سے اب ناز تیرے نہیں اٹھائے جاتے

تو نے الفت کو تماشہ سا بنا رکھا ہے

فرح کے ہاں جہاں رومان کی کارفرمائی نظر آتی ہے وہیں معاشرتی حقائق ، تلخیاں اور ناروا رویوں کا عمدہ اظہار بھی موجود ہے ۔

مسئلہ میرا ہے افلاس،بھوک اور روٹی

بھلا میں کیسے کروں شمس و قمر کی باتیں

دیمک زدہ ہیں رشتے ،بوسیدہ راستے

کیسے بھلا چلیں گے چاہت کے سلسلے

بدل گیا ہے سبھی کا لہجہ کہ موسموں کا مزاج بدلا

دکھوں پہ میرے احباب مسکرائے ،خوشی پہ میری ملال دیکھا

چاند ، ستاروں ،بادل ، خوشبو ، دریا ،ساحل اور رنگوں کے استعاروں اور علامات کا ذکر کرنے والی شاعرہ کی خوب صورت تشبیہات و استعارات ، صنائع وبدائع ، محاورات کی گرہیں اسلوبِ بیان کے معیار میں اضافے کا باعث ہیں ۔

ہیں اشک شبنمی ان کے شرارہ آنکھیں ہیں

ہمارے جینے کا بس یہ سہارہ آنکھیں ہیں

ہے چاند چہرہ ، سیاہ زلف گھٹاؤں جیسی

اور اس پہ روشنی کا استعارہ آنکھیں ہیں

بھنورے،مگس تھے، بادِ صبا بھی خفاخفا

پھولوں سے تتلیوں کی ساز باز دیکھ کر

بے خبر رہا آستیں کے سانپوں سے

اور ہوتے رہے برباد ٹھکانے میرے

سنا ہے کہ پاؤں میں مہندی لگی ہے

بہانے ہیں یہ سب نہ آنے کی خاطر

فرح ناز صاحبہ کا شعری سرمایہ ان کی پہچان اور ان کے لیے باعثِ افتخار ہے۔جس کا اظہار کرتے ہوئے وہ خود کہتی ہیں ۔

کوئی جاگیر چھوڑے گا ، کوئی چھوڑے گا سرمایہ

پہ ہم اشعار کے ارزاں خزانے چھوڑ جائیں گے

خوب صورت خیالات ، تشبیہات ، استعارات ، علامات اور اسلوب سے مزین معیاری غزلیات کی تخلیق کسی معجزے سے کم نہیں ۔

                        نظمیات

                        ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حصہ نظمیات میں شامل 24 نظمیں جن میں ناصرف وزن موجود ہے بلکہ ان کا مقفیٰ اسلوب  معیار کو بلندی عطا کرنے کا باعث ہے۔  نظموں میں موجود تاثیر انھیں تغزل کی خاصیت سے متصف کرتی ہے ۔نظم طویل ہو یا مختصر خیال کی روانی دریا کی مانند امڈتے ہوئے قاری کو اپنی لپیٹ میں لے لیتی ہے ۔

محبت ، وفا اور عشق کے سفر کے بتدریج مراحل کو بیان کرتی نظم “عشقم”شعری مجموعے کا عنوان بھی ہے اور کتاب کا حاصل بھی۔ مزید عکس کی خوب صورتی شعری تاثیر کے لیے مقناطیس ثابت ہوئی ہے ۔

“ادھوری خواہش” ، “ساتھ ساتھ” ، “تشنگی” ،

“آجاؤ نا” ، “نگاہ” ، “بھرم” اور “نا ممکن” میں جس خواہش ، کسک ، تنہائی اور بے اعتباری کا اظہار ہوا ہے اس حقیقت سے نہ تو انکار کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی نظریں چرائی جا سکتی ہیں ۔

نظم “بیٹیاں” اور “ماں”  رشتوں سے متعلقہ خوب صورت احساسات و جذبات کی عمدہ ترجمان ہیں ۔

“شہرِ آشوب” ، “مزدور” اور سیلاب سے متعلقہ نظمیں معاشرتی تلخیوں اور قدرتی آفات کی درد ناک عکاس ہیں ۔

“قلمکار” ، “پیکرِ حسن” ، “آجاؤ نا” لطیف و رومانوی احساسات و جذبات کا خوب صورت اظہار ہیں۔

 نظم “محبت” میں اگر محبت کے وسیع مفہوم کو پیش کیا گیا ہے تو “عزمِ نو” میں محبت سے رونما ہونے والے معجزوں کی توقع کو پیش کیا گیا ہے ۔ محبت میں وفاداری کی اہمیت پر زور دیتی نظم “محبت بیچ ڈالو تم” اور ہجر کے درد و الم کا اظہار کرتی شبِ ہجراں شاہکار کی حیثیت رکھتی ہیں ۔

“اولڈ ہاؤس” میں جدیدیت اور مصروفیت کا نتیجہ بےحسی اور بے ضمیری کو متاثر کن انداز میں پیش کیا گیا ہے۔

“شاعرِ مجبور” میں ایک تخلیق کار کی مجبوریوں اور معاشرے کی خود غرضی کی عمدہ عکاسی کی گئی ہے ۔

“فصلِ گل” موسمِ بہار کی خوبصورتی ، خوشی اور امید کی نوید دیتی ہے ۔

                   انتخاب

                  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

              نظم۔۔۔۔۔محبت بیچ ڈالو تم

          چرا کے آنکھ ملنے سے یہ بہتر ہے

         کبھی ملنے نہیں آؤ نہ پچھلی بات دہراؤ

           نئی دنیا بسا لو تم

           کہ دنیا یونہی چلتی ہے

           یہاں ہر چیز بکتی ہے

           محبت بیچ ڈالو تم

            نئی دنیا بسا لو تم

                   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

                    نظم۔۔۔۔۔۔۔قلمکار

       لفظ رکتے ہی نہیں کاغذ پر

       کبھی جگنو کبھی تتلی سے اڑے جاتے ہیں

      سادہ قرطاس کا رہتا ہے اگرچہ سینہ

      زخم جیسے میرے سینے میں ہوئے جاتے ہیں

     دامنِ صبر تار تار ہوا

       اور ہم ہیں کہ سیے جاتے ہیں

             ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

                 نظم۔۔۔۔۔۔۔محبت

            محبت پھول ہے ایسا

            جو مرجھا بھی اگر جائے

            تو خوشبو پھیل جاتی ہے

            محبت لفظ ایسا ہے

            جہاں لکھ دو وہاں ہر سو

            اجالا پھیل جاتا ہے

             محبت روح ہے

             جو زندگی بےدار کرتی ہے

             محبت شرط ایسی ہے

              اگر بندہ ہے تو اس کا

              تجھے رب سے بھی

             اور محبوب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سےبھی

             محبت کرنا ہی ہو گی

              اجالا تب ہی پھیلے گا

فرح ناز فرح صاحبہ کی شاعری کے معیار کے متعلق حرفِ آخر کے طور پر صرف اتنا کہنا چاہوں گی کہ اسے “دیوانِ فرح” کہنا بے جا نہ ہوگا ۔

پریس فار پیس ایک ادب نواز اور ادب دوست ادارہ ہے جہاں بہت محنت اور محبت سے ادبی اشاعت کا کام سر انجام دیا جاتا ہے ۔ عمدہ کاغذ ، تحریر کی تزئین و آرائش کے علاوہ اغلاط سے پاک طباعت پریس فار پیس کا کمال ہے ۔

فرح نازصاحبہ خوش قسمت ہیں کہ ان کے شعری مجموعے کی اشاعت کا بیڑا پریس فار پیس نے اٹھاتے ہوئے معیار اور خوبصورتی کو چار چاند لگا دیے ہیں ۔

موزوں اور خوب صورت عکوس نے کتاب اور قاری کے درمیان رابطے کو مقناطیسی صلاحیت عطا کر دی ہے ۔

دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ فرح ناز صاحبہ اور پریس فار پیس دونوں کو مزید عروج اور کامیابیاں عطا فرمائے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact