Sunday, May 26
Shadow

ہمارے معاشرے میں موجود مسائل  اور ان کا  حل : تحریر : پروفیسر شاہد حسین میر

پروفیسر شاہد حسین میر

کو دیکھتے ہوئے علمی تناظر کی روشنی میں ایک تحریر لکھی ہے جس کا مقصد چند بڑے مسائل کی نشاندہی کرنا اور ان کا ممکنہ حل تجویز کرنا ہے۔
دور حاضر میں ہمیں معاشرے کے اہم مسائل اور ان کے حل پر گفتگو کرتے وقت، یہ تسلیم کرنا بہت ضروری ہے کہ مختلف خطوں اور کمیونٹیز کو مختلف چیلنجز کا سامنا کرنا پڑ سکتایے یا سامنا کرتے ہیں ۔ تاہم، کئی وسیع موضوعات عالمی سطح پر عام سماجی مسائل کو گھیرے ہوئے ہیں۔ یہاں کچھ اہم مسائل اور ممکنہ حل ہیں:

. **غربت اور عدم مساوات:**
   – مسئلہ: معاشی تفاوت بنیادی ضروریات، تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال تک رسائی کی کمی کا باعث بنتا ہے۔ غربت اور عدم مساوات میرے نزدیک دنیا کا سب سے بڑا مسلئہ ہے بالخصوص ترقی پذیر ممالک جن میں پاکستان بھی شامل ہے اس کی مکمل لپیٹ میں ہیں۔
   – حل: ترقی پسند ٹیکس لاگو کریں، کم از کم اجرت میں اضافہ کریں، سماجی تحفظ کے جال فراہم کریں، تعلیم اور صحت کی دیکھ بھال کے بنیادی ڈھانچے میں سرمایہ کاری کریں، اور پائیدار ترقیاتی منصوبوں کے ذریعے روزگار کی تخلیق کو فروغ دیں۔ وہ ممالک جہاں معاشی تنگی ہے اور قرضہ و سود کے زریعے نظام چلایا جاتا ہے وہ زراعت کے شعبے میں انقلابی تبدیلیاں لا کر غربت سے نکل سکتے ہیں۔
 **موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی انحطاط:**
   – مسئلہ: اس وقت پوری دنیا بلخصوص پاکستان کو دوسرا بڑا مسلئہ گلوبل وارمنگ، آلودگی، جنگلات کی کٹائی، اور قدرتی وسائل کی کمی سے ماحولیاتی نظام اور انسانی بہبود کو خطرہ ہے بالخصوص پاکستان جیسے ممالک میں یہ مسلئہ دن بدن بڑھتا چلا جا رہا ہےجس سے دیگر مسائل جنم لے رہے ہیں۔
   – حل: میرے نزدیک پاکستان کو ایمرجنسی بنیادوں پر قابل تجدید توانائی کے ذرائع کی طرف منتقلی، صنعتوں اور زراعت میں پائیدار طریقوں کو فروغ دینا، حیاتیاتی تنوع کا تحفظ، سخت ماحولیاتی ضابطے نافذ کرنا، اور تعلیم اور عوامی مہمات کے ذریعے بیداری پیدا کرنے کی اشد ضرورت ہے  پاکستان میں نصاب میں ایسے موضوعات کو شامل کرنا ہو گا جن سے مستقبل کی نسلوں کو آگاہی حاصل ہو اور وہ ان مسائل سے نمٹنے کے لیے تیار ہو جائیں۔

. **صحت کی دیکھ بھال تک رسائی اور معیار:**
   – مسئلہ: پاکستان جیسے ممالک میں صحت کی دیکھ بھال کی ناکافی خدمات، اعلی طبی اخراجات، اور علاج تک غیر مساوی رسائی صحت کے تفاوت میں معاون ہے بھی ایک بہت بڑا مسلئہ ہے۔
   – حل: پاکستان میں صحت کی دیکھ بھال کی کوریج کو وسعت دینے کی اشد ضرورت ہے، صحت عامہ کے بنیادی ڈھانچے میں سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے، حکومت کو چاہیے کہ وہ احتیاطی نگہداشت کو فروغ دیں، ادویات کی قیمتوں کو منظم کریں اور بلخصوص دوا ساز کمپنیوں کو من مانی سے روکا جائے، اور جدید علاج کے لیے طبی تحقیق کی حمایت کریں پاکستان میں ایسی جامعات جہاں شعبہ طب ہو وہاں تحقیق کے عمل کو آگے بڑھانے اور اس شعبے میں سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے
**تعلیمی تفاوت:**
   – مسئلہ: پاکستان میں سماجی و اقتصادی حیثیت، جغرافیائی محل وقوع اور ثقافتی عوامل کی بنیاد پر معیاری تعلیم تک غیر مساوی رسائی بھی ایک اہم مسلئہ ہے۔
حل: پاکستان میں اسکول کی سہولیات اور وسائل کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے، حکومت کو چاہیے کہ وہ اسکالرشپ اور مالی امداد فراہم کریں، اساتذہ کی تربیت اور مدد کریں، جامع نصاب کو مساوی بنیادوں پر نافذ کریں، اور زندگی بھر سیکھنے کے مواقع کو فروغ دیں۔ پاکستان میں ایسے علاقے جہاں پر اسکول موجود نہیں ہیں جیسا کہ بلوچستان، سندھ کے علاقے وہاں پر جدید اسکول بنائے جائیں اور عام آدمی کے بچوں کو ان اسکولوں تک رسائی دیں۔
 **سماجی انصاف اور انسانی حقوق:**
   – مسئلہ: پاکستان میں رنگ ،نسل ، قومیت، لسانی و ثقافتی، مذہب بنیادوں پر لوگوں کے ساتھ امتیازی سلوک، ناانصافی، تشدد، اور بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں شروع سے ایک اہم مسلئہ رہا ہے اور یہ مسائل ہمارے ملک میں سماجی ہم آہنگی اور مساوات کو نقصان پہنچاتی ہیں۔

  – حل: پاکستان میں متیازی سلوک کے خلاف قوانین کا نفاذ، تنوع اور شمولیت کو فروغ دینا، پسماندہ کمیونٹیز کی حمایت، قانونی امداد اور وکالت کی خدمات فراہم کرنا، اور انسانی حقوق کے مسائل کے بارے میں بیداری پیدا کرنا۔ میرے نزدیک اس ضمن میں علماء کرام اور انصاف سے تعلق رکھنے والے لوگوں و اداروں کو کلیدی کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے اور اس ضمن میں ان پر بھاری زمہ داری بھی عائد ہوتی ہے کہ وہ حقیقت کو سمجھیں اور اگر وہ سنجیدگی سے اور پوری ذمہ داری سے کام کریں تو مسائل حل ہو سکتے ہیں۔

. **سیاسی بدعنوانی اور گورننس کے مسائل:**
   –  مسلئہ:  پاکستان میں بدعنوانی، شفافیت کا فقدان، اور کمزور حکمرانی کا نظام ترقی کی راہ میں رکاوٹ اور عوامی اعتماد کو ختم کرتا ہے اور یہ ہمیشہ سے موجود ہے اور اگر کوئی مستقل پالیسی نہ بنائی گئی تو یہ کرتا رہے گا۔
   – حل: انسداد بدعنوانی کے اقدامات کو مضبوط بنانا، سرکاری اداروں میں احتساب اور شفافیت کو یقینی بنانا، فیصلہ سازی میں شہریوں کی شرکت کو فروغ دینا، اور انتخابی عمل میں اصلاحات کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ پاکستان میں اس ضمن میں ووٹ ڈالنے کا حق اکثریت کے بجائے تعلیمی قابلیت کی بنیاد پر دیا جائے جس سے شعور کی بنیاد پر لوگ اپنے رہنماؤں کو منتخب کر سکیں گے۔

 **ٹیکنالوجی اور ڈیجیٹل تقسیم:**
   – مسئلہ:  ترقی پذیر ممالک بلخصوص پاکستان میں ٹیکنالوجی اور ڈیجیٹل مہارتوں تک غیر مساوی رسائی مواقع اور معلومات تک رسائی میں تفاوت پیدا کرتی ہے۔
   – حل: حکومت کو چاہیے کہ وہ براڈ بینڈ انفراسٹرکچر کو وسعت دیں، سستی ڈیوائسز اور ڈیجیٹل خواندگی کی تربیت فراہم کریں، ڈیجیٹل شمولیت کے اقدامات کو فروغ دیں، اور اخلاقی طریقوں کو یقینی بنانے کے لیے ٹیک کمپنیوں کو ریگولیٹ کریں۔
ان اہم مسائل کو حل کرنے کے لیے پاکستان میں حکومتوں، سول سوسائٹی کی تنظیموں، کاروباری اداروں اور افراد کی مشترکہ کوششوں کی ضرورت ہے۔ پائیدار اور جامع ترقی کے اہداف کو ترجیح دینا سب کے لیے ایک زیادہ مساوی اور خوشحال معاشرے کا باعث بن سکتا ہے۔
ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم اپنے معاشرے میں اپنے حصے کا کام سر انجام دیں اور وہ لوگ جو ان مسائل کے حوالے سے پالیسی بنانے میں شامل ہیں ان کو بار بار یاد دلائیں یا مسائل کو سوشل میڈیا کے ذریعے اجاگر کریں تاکہ کہیں نہ کہیں کسی حد تک تدارک ممکن ہو سکے اور مسائل حل ہو سکے اور مملکت خداد پاکستان ترقی کی راہ پر گامزن ہو سکے۔
 میرے مطابق پاکستان میں اکیڈمیا سماجی مسائل کو حل کرنے اور ان کے حل میں ایک اہم ذمہ داری نبھا سکتا ہے۔ تحقیق، تعلیم اور علم کی ترسیل کے ذریعے، اکیڈمیا ملک کو درپیش مختلف چیلنجوں کے پائیدار حل تلاش کرنے میں اپنا حصہ ڈال سکتا ہے۔ اس میں غربت، صحت کی دیکھ بھال میں تفاوت، ماحولیاتی انحطاط، سیاسی عدم استحکام اور تعلیم تک رسائی جیسے مسائل شامل ہیں۔ تنقیدی سوچ، اختراع اور شواہد پر مبنی پالیسی سازی کو فروغ دے کر، اکیڈمیا مثبت تبدیلی لانے اور قومی ترقی کو فروغ دینے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔
اللہ پاک ہمارے وطن کو دن کی روشنی میں چوگنی ترقی عطا فرمائے آمین

شاہد حسین میر
شعبہ انگلش/شعبہ لسانیات
جامعہ کوٹلی آذاد کشمیر

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact