شاعر: ظہیر احمد مغل

مسندِ پیار تک نہیں پہنچا

میں درِ یار تک نہیں پہنچا

جل گیا خواب کی حرارت سے

اشک رخسار تک نہیں پہنچا

پھول کی اہمیت نہیں سمجھا

ہاتھ جب خار تک نہیں پہنچا

عدل کو کس کا خوف لاحق ہے

ظلم کیوں دار تک نہیں پہنچا

خاک نے خاک سے کیا دھوکا

عشق اُس پار تک نہیں پہنچا


شاعر ظہیر احمد مغل


Discover more from Press for Peace Publications

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact