غزل 

  ڈاکٹر افتخار مغل

جمال گاہِ تغزل کی تاب و تب تری یاد

پہ تنگنائے غزل میں سمائے کب تری یاد

کسی کھنڈر سے گزرتی ہوا کا نم ترا غم

شجر پہ گرتی ہوئی برف کا طرب تری یاد

گزرگہوں کو اجڑنے نہیں دیا تو نے

کبھی یہاں سے گزرتی تھی تُو اور اب تری یاد

بہ فیضِ دردِ محبت میں خوش نسب میں نجیب

مرا قبیلہ ترا غم، مرا نسب تری یاد

بجز حکایتِ تُو ایں وجود چیزے نیست

میں کُل کا کُل ترا قصہ میں سب کا سب تری یاد

دریں گمان کدہ کُلُّ مَن عَلَیہَا فَان

بس اک چھلاوہ مرا عشق ایک چھب تری یاد

Discover more from Press for Peace Publications

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading

×

Send a message to us on WhatsApp

× Contact